قران کی بیحرمتی کے سلسلے میں امریکی سفارت خانے پر احتجاج کے لئے پاکستان ایسوسی ایشن جاپان کی اپیل پر اجلاس ۔

 

امریکہ میں نائن الیون کے موقع پر کچھ شرپسند عیسائیوں کی جانب سے قران کریم کی بیحرمتی کے چند واقعات ہوئے ۔ انہوں نے بعض مقامات پر قران کریم کے اوراق پھاڑے اور ایک مقام پر ان مقدس اوراق کو آگ لگانے کی کوشش کی ۔ نعوذ باللہ ۔

دنیا بھر کے مسلمانوں میں اس واقعے پر شدید غم و غصہ پایا جاتا ہے ، اور دنیا بھر میں اس پر احتجاج کیا جارہا ہے ۔ یقیناً کسی مہذب معاشرے میں کسی بھی شخص کو ، کسی مذہب کی توہین کی اجازت نہیں دی جانی چاہئے ۔ لیکن امریکی حکومت ، شہریوں کی آزادی کے قوانین کی آڑ میں ، ان شرپسندانہ واقعات کی روک تھام نہیں کرتی ۔

جاپان میں مقیم پاکستانی بھی اس واقعے پر سراپا احتجاج ہیں ۔ اس احتجاج کو باقاعدہ شکل دے کر احتجاجی مظاہرے میں ڈھالنے کا پروگرام طے کرنے کی غرض سے ، پاکستان ایسوسی ایشن جاپان کی پکار پر ، بدھ کی شام ٹوکیو کے ہنزہ ریستوران میں ایک اجلاس منعقد ہوا ۔ اجلاس میں کئی تنظیموں کے نمائندے اور عام پاکستانی شریک ہوئے ۔ اجلاس میں طے کیا گیا کہ جمعے کی دوپہر ٹوکیو میں امریکی سفاتخانے کے سامنے احتجاج کیا جائے اور انہیں احتجاجی یادداشت پیش کی جائے ۔

پروگرام کے تحت تمام مسلمانوں سے روپّونگی اسٹیشن کے قریب واقع مِکاوادائی پارک میں دوپہر ایک بجے جمع ہونے کی گزارش کی گئی ہے ۔ جمعے کی نماز پارک میں ہی ادا کی جائے گی ۔ دیگر مقامات پر جمعہ پڑھ کر آنے والے افراد سے ، دو بجے تک پارک میں پہنچنے کی درخواست کی گئی ہے ۔

پارک سے امریکی سفارتخانے تک جلوس کے راستے کا تعین مقامی پولیس سے مشاورت کے بعد طے کیا جاچکا ہے ۔ مقررہ راستے پر چلتا ہوا ہوا جلوس ، انگریزی اور جاپانی زبان میں لکھے ہوئے احتجاجی کتبے اٹھائے ہوئے ہوگا ۔ امریکی سفارتخانے کے سامنے پہنچ کر ، چند افراد احتجاجی یادداشت امریکی سفارتخانے کے حوالے کریں گے ۔

پاکستان ایسوسی ایشن جاپان کے جنرل سیکرٹری نے واضح کیا ہے کہ لائحہ عمل کی تیاری کا یہ اجلاس تو پاکستان ایسوسی ایشن جاپان کی جانب سے منعقد کیا گیا تھا ، لیکن احتجاجی جلوس ایسوسی ایشن کی جانب سے بلکہ جاپان میں مقیم تمام مسلمانوں کی جانب سے ہوگا ۔ اجلاس میں طے کیا گیا کہ کوئی تنظیم احجاجی جلوس میں اپنا نام استعمال نہیں کرے گی ۔ کسی تنظیم کا بینر یا جھنڈا نہیں لایا جائے گا ۔ تمام شرکاءصرف اسلام اور قران کی توہین کے خلاف انگریزی اور جاپانی کتبے اٹھائیں گے ۔شرکاء سے ، ممکنہ حد تک تعرے بازی سے بھی باز رہنے اور خاموش احتجاج کی اپیل کی گئی ہے ۔