میانمار میں مسلمانوں پر مظالم کےخلاف  سفارتخانے کے سامنے احتجاجی مظاہرہ
 

 میانمار میں مسلمان اقلیت ’روہنگیا‘  پر مظالم اور ان کی نسل کشی  کے اقدامات پر احتجاج کے لیے، جاپان کی مسلم کمیونٹی کی جانب سے، جمعہ 10؍ اگست کو ٹوکیو میں واقع میانمار کے سفارتخانے کے سامنے ایک مظاہرہ کیا گیا۔احتجاجی مظاہرے میں کوئی ڈیڑھ سو افراد شریک ہوئے، جن میں تقریباً  نصف تعداد پاکستانیوں کی تھی۔ تاہم، بنگلہ دیش، میانمار، انڈونیشیا، اور عرب ممالک کے افراد ساتھ ساتھ چند جاپانی بھی شرکت تھے۔سخت گرمی اور روزے سے ہونے کے باوجود،  خواتین اور چھوٹے بچوں نے بھی مسلمان بھائیوں پر ہونے والے مظالم کے خلاف اس احتجاج میں شرکت کی  ۔

احتجاجی مظاہرے کے روح رواں سینئر پاکستانی نعیم الغنی ارائیں، اور بھارت سےتعلق رکھنے والے عالم دین سلیم الرحمان خان تھے۔ سہ پہر 3 بجے سے شام 5 بجے تک اس مظاہرے   کے انعقاد کے لیے ٹوکیو پولیس سے باقاعدہ اجازت حاصل کی گئی تھی۔  مظاہرے کے اختتام پر سفارتخانے کے عملے  کو احتجاجی یادداشت پیش کی جانی تھی، تاہم سفارتخانے سے کسی فرد کے باہر نہ آنے کے باعث، احتجاجی یادداشت گیٹ پر موجود ڈاک کے ڈبے میں ڈالی گئی۔
 

 
مظاہرے کی تصاویر