دائتو بنکا یونیورسٹی میں سالانہ اردو مشاعرہ و  ثقافتی تقریب

 

جاپان کی ایک جامعہ ، دائتو بُنکا یونیورسٹی میں ، ہفتہ 11دسمبر 2010کو ،شعبہ اردو کے زیر اہتمام ایک ثقافتی تقریب منعقد ہوئی ۔ تقریب کا مرکزی حصہ اردو مشاعرہ تھا ، تاہم اس میں جاپانی موسیقی ، جاپان اور پاکستان سے متعلق کوئز پروگرام ، اور طلباء و طالبات کا بیت بازی کا پروگرام بھی شامل تھا ۔

جاپانی معاشرے میں عام گفتگو کے لئے جاپانی زبان ہی استعمال ہوتی ہے ، اور یہاں انگریزی سمیت غیر ملکی زبانوں کا استعمال بہت محدود ہے ۔ تاہم ، جاپان کے کئی تعلیمی اداروں میں ، مختلف غیر ملکی زبانوں کی تعلیم دی جاتی ہے ۔ ان زبانوں میں ، پاکستان کی قومی زبان اردو بھی شامل ہے ، جو جاپان میں کوئی ایک سو برس قبل متعارف کروائی گئی تھی، اور آج کل کئی جامعات اور زبانوں کے خصوصی اسکولوں میں پڑھائی جاتی ہے ۔ پڑھانے والے اساتذہ پاکستانی بھی ہیں ، اور جاپانی بھی ۔

جاپان میں اردو کی ترویج میں’ دائتو بنکا یونیورسٹی‘ کا بھی قابل ذکر حصہ ہے ۔ مذکورہ یونیورسٹی میں اردو کے استاد جناب ’ہیروجی کتاؤکا‘ ہیں ، جنہیں اردو کے فروغ کی خدمات پر ، صدر پاکستان کی جانب سے ’ ستارہ پاکستان‘ بھی دیا جا چکا ہے ۔

 

اردو ہے جس کا نام ہمیں جانتے ہیں داغ

سارے جہاں میں دھوم ہماری زباں کی ہے

 

دائتو بنکا یونیورسٹی کے سائتاما پریفیکچر کے ’ ہِگاشی ماتسُویاما‘ شہر میں واقع کیمپس میں ، ہفتہ 11 دسمبر کو ، 13واں سالانہ مشاعرہ اور ثقافتی تقریب منعقد ہوئی ۔ تقریب میں اردو زبان سیکھنے والے طلباء و طالبات نے جاپان کے روایتی سازوں ’ کوتو‘ اور ’ شامی سین‘ پر جاپانی موسیقی پیش کی ۔ چند طالبعلموں نے شاعر مشرق علامہ اقبال کی نظمیں پیش کیں ، جبکہ بیت بازی میں تقریباً تمام طلباء و طالبات نے حصہ لیا  ۔

بعد ازاں ایک کوئز پروگرام کا انعقاد بھی کیا تھا ، جس میں جاپانی حاضرین سے پاکستان کے بارے میں ، اور پاکستانی حاضرین سے جاپان کے بارے میں سوالات کئے گئے ۔ ہفتے کی تقریب کا مرکزی حصہ اردو مشاعرہ تھا ، جس میں جاپان میں مقیم کئی پاکستانی شعراء نے حصہ لیا ، اور اپنے کلام سے حاضرین کو محظوظ کیا ۔

تقریب کے آخر میں ، لذیذ بریانی اور چائے سے مہمانوں کی تواضع کی گئی ۔